اردوئے معلیٰ

Search

روشن ہو مرے دل میں دیا ان کی ولا کا

ہونٹوں پہ مرے ذکر رہے صلِ علیٰ کا

 

مشغول رہے میرا قلم اُن کی عطا سے

آ جائے سلیقہ بھی مجھے حمد وثنا کا

 

ہوں میرے مقدر میں بھی طیبہ کے شب وروز

عاجزپہ بڑا ہوگا یہ احسان خدا کا

 

خم ہونے لگا شکر کے سجدے میں فلک بھی

نظارہ جو دیکھا ترے نقشِ کفِ پا کا

 

حسرت ہے کہ مدحت کے پروتی رہوں موتی

تا زیست رہے سلسلہ یہ مجھ پہ عطا کا

 

انوار برستے ہیں جو سرکار کے در پر

ہو جائے عطا چھینٹا مجھے ایسی گھٹا کا

 

اے ناز تجھے آیا ہے طیبہ سے بلاوا

پیغام ملا آج تجھے بادِ صبا کا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ