اردوئے معلیٰ

Search

رُوبرو جب بھی قبائل ہو گئے

جرأتِ آقا کے قائل ہو گئے

 

اس قدر عزت ترے در سے ملی

ذی حشم سارے ہی سائل ہو گئے

 

تیرا صدقہ منزلیں آساں ہوئیں

راستے خوشبو شمائل ہو گئے

 

صحبتِ سرکار سے اہلِ عرب

کس قدر ارفع خصائل ہو گئے

 

پتھروں نے ہیں پڑھے تجھ پر درود

عشق میں تیرے وہ گھائل ہو گئے

 

جب بڑھی مشکل کوئی میری طرف

بس درود و نعت حائل ہو گئے

 

امتِ ناداں پہ آقا ہو کرم

لوگ بربادی پہ مائل ہو گئے

 

واسطہ رب کو دیا اُن کا شکیلؔ

حل بہ آسانی مسائل ہو گئے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ