زمینِ ُحسن پہ مینارۂ جمال ہے ُتو

زمینِ حسن پہ مینارۂ جمال ہے تو

مثال کیسے ہو تیری کہ بے مثال ہے تو

 

سخن کے دائرے محدود ہیں بہ حدِ طلب

ورائے فہم ہے تو اور پسِ خیال ہے تو

 

رہے گا تیرے ہی نقشِ قدم سے آئندہ

جہانِ ماضی ہے تو اور جہانِ حال ہے تو

 

کتابِ زندہ ہے تیری حیاتِ نور کی نعت

مطافِ حرف ہے تو، قبلۂ مقال ہے تو

 

ترے ہی اِسم کی رہتی ہے قوسِ لب پہ نمود

نگارِ عصر کی تسبیحِ ماہ و سال ہے تو

 

وجودِ عجز میں تارِ نفَس ہے ذِکر ترا

مری طلب، مرا کاسہ، مرا سوال ہے تو

 

مَیں خود تو صیغۂ متروک ہُوں مرے آقا

یہ حرف و صوت، یہ اسلوب، یہ خیال ہے تو

 

زوالِ ذات میں بِکھرا ہُوا ہے تو مقصودؔ

کرم ہے شہ کا تہہِ دستِ با کمال ہے تو

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ