زمیں پر مصطفی آئے مبارک ہو، مبارک ہو

زمیں پر مصطفی آئے مبارک ہو، مبارک ہو

حبیبِ کِبریا آئے مبارک ہو، مبارک ہو

 

ہمارے ناخدا، رُوحِ جہاں وہ محسنِ اعظم

امام الانبیاء آئے مبارک ہو، مبارک ہو

 

بہارِ خُلد لے کر اِس گُلستانِ عنایت میں

وہی بادِ صبا آئے مبارک ہو، مبارک ہو

 

کرم کی بارشیں بھی ہو رہی ہیں ذرّے، ذرّے پر

سخی مشکل کشا آئے مبارک ہو، مبارک ہو

 

فلک سے نور اُترا ہے فضائیں بھی منوّر ہیں

شہِ ارض و سما آئے مبارک ہو، مبارک ہو

 

پکارو! مرحبا! صد مرحبا! جشنِ ولادت میں

وہ احمد مجتبیٰ آئے مبارک ہو، مبارک ہو

 

زمانہ جستجو میں تھا اَزَل سے جن کے آنے کی

وہی خیرالواریٰ آئے مبارک ہو، مبارک ہو

 

حسینوں سے حسیں تر ہیں وہی نورِ مجسم بھی

جہاں کے دِلربا آئے مبارک ہو، مبارک ہو

 

سرِ تسلیم خم کر لو، نگاہوں میں ادب بھر لو

کہ فخرِ دوسرا آئے مبارک ہو، مبارک ہو

 

کریں گھر، گھر چراغاں بھی رضاؔ اب سارے دیوانے

سبھی کے پیشوا آئے مبارک ہو، مبارک ہو

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

جان ہیں آپؐ جانِ جہاں آپؐ ہیں
ہر موج ہوا زلف پریشانِ محمدؐ
رشکِ ایجاب تبھی حرفِ دعا ہوتا ہے
قصہء شقِّ قمر یاد آیا​
ہم گداؤں بے نواؤں کا سہارا آپ ہیں
گھڑی مڑی جی بھر آوندا اے ۔ پنجابی نعت
ہر طرف پھیلی جمالِ مصطفی کی روشنی
جو عرش کا چراغ تھا میں اس قدم کی دھول ہوں
ہم مدحتِ رسولِ گرامی اگر کریں
بے مثل ہے کونین میں سرکارؐ کا چہرہ

اشتہارات