اردوئے معلیٰ

Search

زندگی پائی ہے ان سے لو لگانے کے لیے

دل ملا زیرِ قدم ان کے بچھانے کے لیے

 

اک ہمیں کیا رہ گئے بس آزمانے کے لیے

اور دنیا بھی تو ہے تیرے ستانے کے لیے

 

یہ شبِ ہجراں تو آئی ہے نہ جانے کے لیے

دوستو آنا مری مٹی اٹھانے کے لیے

 

حرص کی عادت نہ چھوٹی سبحہ گردانی میں بھی

دستِ زاہد دیکھ جنباں دانے دانے کے لیے

 

اک چراغِ آرزو دل میں کہ ہے روشن ہنوز

آندھیاں درپے ہیں اس کو بھی بجھانے کے لیے

 

کیسۂ دل میں نہ رکھ حرص و ہوس، بغض و عناد

اس کو مختص کر محبت کے خزانے کے لیے

 

وقت کے ماتھے پہ بل آئے بس اتنی بات پر

چند لمحے مل گئے تھے مسکرانے کے لیے

 

سر جھکانے کو ہمارا اس قدر مشقِ ستم

کیا کریں گے وہ نظرؔ یہ دل جھکانے کے لیے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ