اردوئے معلیٰ

Search

زندہ حقیقتوں سے چھپایا گیا ہمیں

ماضی کی داستاں میں بسایا گیا ہمیں

 

چھینا گیا لبوں سے تبسم بنامِ سوز

قصے کہانیوں پہ رُلایا گیا ہمیں

 

اپنے سوا ہر عکس ہی بگڑا ہوا لگا

آئینہ اِس طرح سے دکھایا گیا ہمیں

 

پہلے تو ایک درسِ اخوّت دیا گیا

پھر حرفِ اختلاف پڑھایا گیا ہمیں

 

کانوں میں زہرِ کفر انڈیلا گیا ہے روز

پھر کلمۂ یقین سنایا گیا ہمیں

 

اُٹھ کر پتہ چلا کہ قیامت گذر چکی

ایسا تھپک تھپک کے سُلایا گیا ہمیں

 

دوزخ کی آگ بھوکے بدن سے لپیٹ کر

وعدہ بہشت کا بھی دلایا گیا ہمیں

 

تقریبِ دوستاں میں ستم در ستم ہوا

تعظیم دشمناں میں اٹھایا گیا ہمیں

 

پیشانیوں پہ قیمتیں لکھ کر مثالِ جنس

بے حد و بے حساب کمایا گیا ہمیں

 

پانی نہیں تھے خون پسینہ تھے ہم ظہیرؔ

سیراب بستیوں میں بہایا گیا ہمیں

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ