اردوئے معلیٰ

زیست کی روحِ رواں ہے مرے خواجہ کی نظر

 

زیست کی روحِ رواں ہے مرے خواجہ کی نظر

شاملِ حالِ جہاں ہے مرے خواجہ کی نظر

 

مونسِ غم زدگاں ہے مرے خواجہ کی نظر

ہر گھڑی فیض رساں ہے مرے خواجہ کی نظر

 

بصرِ بے بصراں ہے مرے خواجہ کی نظر

ہنرِ بے ہنراں ہے مرے خواجہ کی نظر

 

وجہِ تخلیقِ جہاں ہے مرے مولا کا وجود

مژدہ امن و اماں ہے مرے خواجہ کی نظر

 

تا ابد ہر کلمہ گو کے نگہباں ہیں آپ

جانبِ اُمتیاں ہے مرے خواجہ کی نظر

 

میری سرکار کی رحمت ہے محیطِ عالم

از کراں تا بہ کراں ہے مرے خواجہ کی نظر

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ