اردوئے معلیٰ

Search

سخن با آبرو ہو جائے تو پھر نعت ہوتی ہے

تخیل سرخرو ہو جائے تو پھر نعت ہوتی ہے

 

کہیں نُدرت کی خوشبو سے کہیں اُن کے پسینے سے

سُخن جب مُشکبو ہو جائے تو پھر نعت ہوتی ہے

 

خیالوں میں نہ بسنے دیں اگر دنیا کی رونق کو

نبی کی جستجو ہو جائے تو پھر نعت ہوتی ہے

 

حرا کے غار کی حسرت بھلے ہو خاکِ بطحا کی

سلامِ آرزو ہو جائے تو پھر نعت ہوتی ہے

 

محبت سے یہ دل بولے یا لکھنا ہی عمل ٹھہرے

نبی کی گفتگو ہو جائے تو پھر نعت ہوتی ہے

 

مدینے کی زمیں چوموں یا خوابوں میں تسلسل سے

زیارت آرزو ہو جائے تو پھر نعت ہوتی ہے

 

اُنہی کا نور دل دیکھے جدھر سوچے اُدھر پائے

رسائی چارسو ہو جائے تو پھر نعت ہوتی ہے

 

سخن شائق قلم کی نوک لکھ دے جب فقط آقا

وہ خوشبو کُو بہ کُو ہو جائے تو پھر نعت ہوتی ہے

 

سلامِ دل نظر اپنی جھکا کر بھیجتا ہوں تو

مدینہ روبرو ہو جائے تو پھر نعت ہوتی ہے

 

فراقِ چشم کی دولت شبِ غم کے قرینے سے

جب اشکوں کا سبُو ہو جائے تو پھر نعت ہوتی ہے

 

نظر ڈالوں میں جب خضریٰ کے اندر نور پر قائم

شکستہ دل رفو ہو جائے تو پھر نعت ہوتی ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ