سرمایۂ افکار ، عطائے شہہِ والا

سرمایۂ افکار ، عطائے شہہِ والا

پیرایۂ اظہار ، عطائے شہہِ والا

 

یہ چشمِ گہر بار ، غریبوں کا اثاثہ

یہ چشمِ گہر بار ، عطائے شہہِ والا

 

یہ لمحۂ دیدار ، حصولِ شبِ ہجراں

یہ لمحۂ دیدار ، عطائے شہہِ والا

 

یہ طالعِ بیدار کہ دل محوِ ثنا ہے

یہ طالعِ بیدار ، عطائے شہہِ والا

 

وہ گنبد و مینار مرے پیشِ نظر ہیں

انوار ہی انوار ، عطائے شہہِ والا

 

اخترؔ سا گناہگار ، ثنا خوانِ محمد

ہے بخششِ سرکار ، عطائے شہہِ والا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ