اردوئے معلیٰ

 

سر نہیں جھکتا ہے نہ جھکے، دل جان سے جھکتا لگتا ہے

راہِ نبی کا ذرّہ ذرّہ مجھ کو تو کعبہ لگتا ہے

 

روح مجسم ہوتی ہے لمحات سلامی دیتے ہیں

یادِ نبی جب آجاتی ہے کیا کہوں کیسا لگتا ہے

 

جب وہ طلب فرمائیں گے میں اُڑ کے مدینے پہنچوں گا

حاضریٔ فردوسِ بریں میں اپنا بھلا کیا لگتا ہے

 

غرقِ ادب ہو جاتا ہے ہر زور بھیانک طوفاں کا

موجِ کرم سے اپنا سفینہ ایسی جگہ جا لگتا ہے

 

صبحِ ازل کی بات نہیں ہے شامِ ابد کا ذکر نہیں

مجھ کو تو ان کا اک اک جلوہ دیکھا دیکھا لگتا ہے

 

اہل خرد جب ذکر محمد پاسِ ادب سے کرتے ہیں

میرے کلیجے پر گویا، تیر سا اک آلگتا ہے

 

عشق نبی کی دنیا میں مفہوم عبادت کیا کہیے

جو بھی قدم اُٹھتا ہے اپنا سجدہ بہ سجدہ لگتا ہے

 

جذبِ عمل سے بے خود ہوکر سر نہ جھکاؤں کیسے صبیحؔ

مجھ کو تو نامِ آلِ عبا بھی نام نبی کا لگتا ہے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات