اردوئے معلیٰ

Search

سر پہ رکھے گا مرے دستِ اماں کتنی دیر

باد بے درد میں تنکوں کا مکاں کتنی دیر

 

پوچھتی ہیں مری اقدار مرے بچوں سے

ساتھ رکھو گے ہمیں اور میاں کتنی دیر

 

بجھ گئی آگ تمناؤں کی جلتے جلتے

کچھ دھواں باقی ہے لیکن یہ دھواں کتنی دیر

 

رزق برحق ہے مگر یہ کسے معلوم کہ اب

رزق لکھا ہے مقدر میں کہاں کتنی دیر

 

جا چکے پتے، ہوائیں بھی چلی جائیں گی

بے سبب ٹھہرے گی پیڑوں پہ خزاں کتنی دیر

 

ریگ زاروں میں کسے ڈھونڈنے نکلے ہو ظہیرؔ

ریت پر رہتے ہیں قدموں کے نشاں کتنی دیر

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ