سلام اس پر، کہ نام آتا ہے بعد اللہ کے جس کا

سلام اس پر، کہ نام آتا ہے بعد اللہ کے جس کا

سلام اس پر، مقام آتا ہے بعد اللہ کے جس کا

 

سلام اس پر، جسے اللہ نے مبعوث فرمایا

سلام اس پر، کہ جس نے پرچمِ توحید لہرایا

 

سلام اس پر، جو آیا نازشِ پیغمبراں بَن کر

سلام اس پر، جو آیا درد مندِ اِنس وجاں بن کر

 

سلام اس پر، خدا نے خود محمد جس کو فرمایا

سلام اس ابرِ رحمت پر، کہ جس کا ہم پہ ہے سایہ

 

سلام اس پر، کہ جو ختم الرسل، محبوبِ داور ہے

سلام اس پر، کہ جو مظلوم انسانوں کا یاور ہے

 

سلام اس پر، حرا میں جس پہ اتری آیتِ اقراء

سلام اس پر، کہ لہرایا ہے جس نے رایتِ اقراء

 

سلام اس پر، لقب ہے رحمتہ اللعالمیں جس کا

سلام اس پر، دو عالم میں کوئی ثانی نہیں جس کا

 

سلام اس پر، جو اُمّی مہبطِ وحیِ الہیٰ ہے

سلام اس پر، کہ جو، منذر، مبشر اور ناہی ہے

 

سلام اس پر، کہ جو ہے مہتدیِ نوعِ انسانی

سلام اس پر، کہ جو ہے قاریِ آیاتِ قرآنی

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

زیرِ افلاک نطق آقا کا
حدودِ طائر سدرہ، حضور جانتے ہیں
ہماری جاں مدینہ ہے، ہمارا دل مدینہ ہے
خدا نے مغفرت کی شرط کیا راحت فزا رکھ دی
محمد مصطفیٰ یعنی خدا کی شان کے صدقے
زندگی شاد کیا کرتی ہے
نعت لکھنی ہے مگر نعت کی تہذیب کے ساتھ
لمحہ لمحہ شمار کرتے ہیں
مدینہ کی بہاروں سے سکونِ قلب مِلتا ہے
ہوں میری باغ و بہار آنکھیں

اشتہارات