اردوئے معلیٰ

سلام اے آمنہ کے لال اے محبوب سبحانی​

سلام اے فخرِ موجودات فخرِ نوع انسانی​

 

سلام اے ظلِ رحمانی، سلام اے نورِ یزدانی​

ترا نقشِ قدم ہے زندگی کی لوحِ پیشانی​

 

سلام اے سرِ وحدت اے سراجِ بزمِ ایمانی​

زہے یہ عزت افزائی، زہے تشریف ارزانی​

 

ترے آنے سے رونق آگئی گلزارِ ہستی میں​

شریکِ حال قسمت ہو گیا پھر فضلِ ربانی​

 

سلام اے صاحبِ خلقِ عظیم انساں کو سکھلا دے​

یہی اعمالِ پاکیزہ یہی اشغالِ روحانی​

 

تری صورت، تری سیرت، ترا نقشا، ترا جلوہ​

تبسم، گفتگو، بندہ نوازی، خندہ پیشانی​

 

اگرچہ فق فخری رتبہ ہے تیری قناعت کا​

مگر قدموں تلے ہے فرِ کسرائی و خاقانی​

 

زمانہ منتظر ہے اب نئی شیرازہ بندی کا​

بہت کچھ ہو چکی اجزائے ہستی کی پریشانی​

 

زمیں کا گوشہ گوشہ نور سے معمور ہو جائے​

ترے پرتو سے مل جائے ہر اک ذرے کو تابانی​

 

حفیظ بے نوا کیا ہے گدائے کوچہِ الفت​

عقیدت کی جبیں تیری مروت سے ہے نورانی​

 

ترا در ہو مرا سر ہو مرا دل ہو ترا گھر ہو​

تمنا مختصر سی ہے مگر تمہید طولانی​

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات