اردوئے معلیٰ

سلام اے شہِ ہدیٰ سلام اے مہِ عرب

ملا خدا سے ہے مجھے جو بہرۂ سخن وری

 

تو پیش کر رہا ہوں میں یہ ہدیۂ ثنا گری

تو سرگروہِ انبیاء تو نازشِ پیمبری

 

رخِ سخن تری طرف کہوں میں ہو کہ با ادب

سلام اے شہِ ہدیٰ سلام اے مہِ عرب

 

حبیبِ ربِ دوجہاں نبی آخر الزماں

تمہاری ذاتِ پاک ہے بنائے بزمِ کن فکاں

 

تمہارے دم قدم سے ہے منور اپنا خاکداں

تمہاری ذات مصطفیٰ تمہارا نام منتخب

 

سلام اے شہِ ہدیٰ سلام اے مہِ عرب

خلیلِ رب کی تو دعا ہے آمنہ کا تو پسر

 

ہے اک دُرِ یتیم تو مگر ہے رشکِ نُہ گہر

بشر کی نسل سے ہے تو مگر ہے سید البشر

 

زہے تو اشرف الحسب خوشا تو عالی النسب

سلام اے شہِ ہدیٰ سلام اے مہِ عرب

 

تو سرگروہِ مرسلاں تو تاجدارِ صالحیں

تو سُکرِ قلبِ عارفاں تو نورِ قلبِ مومنیں

 

چراغِ راہِ سالکاں تو سوزِ قلبِ عاشقیں

ہے تیری یاد دل بہ دل ہے تیرا ذکر لب بہ لب

 

سلام اے شہِ ہدیٰ سلام اے مہِ عرب

صراطِ مستقیم کا تو بے مثال رہنما

 

تو قبلۂ خدا نما تجھی پہ دیں کی انتہاء

پیمبری کا سلسلہ تجھی پہ مختتم ہوا

 

مزکّیِ نفوس و جاں معلمِ کتابِ رب

سلام اے شہِ ہدیٰ سلام اے مہِ عرب

 

خدا پکارے مرحبا نبیُّنا رسولنا

ہر امتی کی ہے صدا شفیعنا حبیبنا

 

ہے بزمِ دوجہاں میں تو متاعنا متاعنا

پہنچ رہا ہے دم بدم درودِ بندگانِ رب

 

سلام اے شہِ ہدیٰ سلام اے مہِ عرب

خدائے لاشریک کی کہیں پہ بندگی نہ تھی

 

چہار سو تھی ظلمتیں بگڑ چکی تھی زندگی

تو لے کے آیا روشنی تو زندگی نکھر گئی

 

سنور گئے ترے ہی دم سے کار ہائے منشعب

سلام اے شہِ ہدیٰ سلام اے مہِ عرب

 

تمہارے شہر میں رہا ہوں آٹھ دن میں معتکف

وہاں پہ دل کا رنگ تھا ہزار درجہ مختلف

 

ثواب کا حریص تھا ہر اک گنہ سے منحرف

زبان و دل کی تھی صدا چلا ہوں میں وہاں سے جب

 

سلام اے شہِ ہدیٰ سلام اے مہِ عرب

شفیعِ روزِ حشر ہے خوشا تو اے شہِ امم

 

بلند بام ہے وہاں بھی تیرے نام کا عَلم

ابھی سے لے رہا ہوں میں بہ ہر قدم ترا قدم

 

کرم کی اک نظرؔ وہاں مجھے ہے خوفِ ما کَسب

سلام اے شہِ ہدیٰ سلام اے مہِ عرب

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات