اردوئے معلیٰ

سلام اے محمد! ، اے احمد! ، اے حامد!​

 

سلام

 

سلام اے محمد! ، اے احمد! ، اے حامد

سلام اے مبشر! ، اے داعی! ، اے شاہد

سلام اے گلستانِ عالم کی زینت

سلام اے کل اولادِ آدم کی جنت

سلام اے مبلغ! ، سلام اے مذکر

سلام اے مزمل! ، سلام اے مدثر

سلام اے جو محبوب و عاشق ہے رب کا

سلام اے جو معشوق و جاناں ہے سب کا

سلام اے دعائے خلیلِ الٰہی

سلام اے مسیحِ خدا کی گواہی

سلام اے جو آیا بحالِ یتیمی

سلام اے جو آیا بشانِ کریمی

سلام اے یتیموں ، فقیروں کے مولا

سلام اے امیروں ، رئیسوں کے آقا

سلام اے میرے روح و دل جس کا مسکن

سلام اے دھڑکتے ہوئے دل کی دھڑکن

تمنا تھی عرصے سے روضے پہ آؤں​

جو غم ہے مجھے ، آپ کو بھی سناؤں​

کہاں سے میں دکھڑے کو آغاز بخشوں​

حضورِ رسالت کا اعزاز بخشوں​

صحابہ نے اسلام پھیلا دیا تھا​

گلستانِ امت کو چمکا دیا تھا​

مگر چھا گیا پھر چمن پر تنزل​

بچا پھر نہ گل اور نہ خوشبو ، نہ بلبل​

خزاں آگئی رفتہ رفتہ چمن میں​

عدم چھا گیا دھیرے دھیرے امن میں​

اطاعت نہ کی آپ کی سنتوں کی​

نہ کی قدْر کچھ آپ کی محنتوں کی​

نہ والد کی عزت ، نہ ماں کی ہے عظمت​

نہ بہنوں پہ شفقت ، نہ بھائی سے الفت​

نہ پردے میں باقی رہی آج عورت​

نہ مردوں کے چہروں پہ سنت کی زینت​

یہ انسان کیسے عمل کر رہے ہیں​

بشر ہی بشر کو قتل کر رہے ہیں​

نہ تبلیغ باقی ، نہ تعلیم حاصل​

نہ فہمِ رسالت ، نہ توحید کامل​

طریقے سبھی آپ کے جب سے چھوٹے​

ہوا متحد کفْر ، مسلم ہیں ٹوٹے​

عجب سی گھڑی مصطفی! آں پڑی ہے​

دہانے پہ خطروں کے امت کھڑی ہے​

تلاوت کجا ، یہ نمازوں سے غافل​

عمل تو کجا ، یہ عقائد سے جاہل​

غلام آپ کے در پہ آتے ہیں رہتے​

سلام آپ کے در پہ آکر ہیں کہتے​

ہو میری طرف سے درودوں کا ہدیہ​

ہو میری طرف سے سلاموں کا عطیہ​

سلام اے تمام انس و جن سے مکرم

سلام اے قلم ، لوح و کرسی سے اکرم

سلام اے ہر اک پر کرم کرنے والے

سلام اے میری چشم نم کرنے والے

سلام اے کلامِ الٰہی کے حامل

سلام اے منور! ، اے انسانِ کامل

سلام اے مدینے کی گلیوں کے راہی

سلام اے پیمبر! ، اے ہادی! ، اے داعی

سلام اے نبی تا قیامت کے ہادی

سلام اے قیامت میں کوثر کے ساقی

سلام اے شفاعت کے جن کی ہیں طالب​

اساؔمہ اور اس کے عزیز و اقارب​

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ