سلسبیلِ نور

فلک سے تا فرشِ خاک اِک سلسبیلِ نورِ ازل ہے جاری

مسرتوں کے چمن کھلے ہیں کرم پہ مائل ہے ذاتِ باری

 

ہے غرب تا شرق شورِ صلِّ علیٰ‘ کہ رحمت برس رہی ہے

عروسِ نو کی مثال گیتی تمام خوشبو میں بس رہی ہے

 

بساطِ عالم کا چپہ چپہ زُجاجِ انوار ہو رہا ہے!

کہ نورِ رَبُّ العُلیٰ کا ہر شئے سے صاف اظہار ہو رہا ہے

 

درود پڑھتا ہے ذرّہ ذرّہ کہ عیدِ میلادِ شاہِ دیں ہے

پکارتا ہے ہر ایک گوشہ کہ رحمتِ ذوالمنن یہیں ہے

 

وہ آنے والا ہے جس کے دم سے جہاں کی کُل تیرگی چھٹے گی

کہ جس کی آمد سے نسلِ آدم کو اِک نئی آگہی ملے گی

 

وہ احمدِ مجتبیٰ ﷺ جو دنیا کو دینِ حق کا پیام دیں گے

وہ جن کے آگے تمام لات و منات و عزیٰ ہبل جھکیں گے

 

جو اُن کو مانے گا دین و دنیا میں صاحبِ اقتدار ہو گا

چلے گا نقشِ قدم پہ جو اُن کے، بس وہی ذی وقار ہو گا

 

تمام اَدیانِ کہنہ منسوخ کرنے آتا ہے ایک ہادی

کہ جس کے نعرے سے گونج اٹھیں گے بلاد و قریہ، پہاڑ وادی

 

پھر اس زمانے نے یہ بھی دیکھا وہ مظہرِ شانِ لم یزالی

زمیں پہ آیا اور آ کے یکسر جہاں کی حالت بدل ہی ڈالی

 

ملا دیا رَبّ سے اس کے بندوں کو سیدالمرسلیںؐ نے آ کر

ہر ایک جانب کیا اُجالا چراغ توحید کے جلا کر

 

تمام اَصنامِ خود تراشیدہ ایک اُمِّیْ نے توڑ ڈالے

اُسی ﷺ نے بیت الحرام سے پھر بنے ہوئے سب خدا نکالے

 

وہ جس نے آ کر جہاں سے تفریقِ رنگ و نسل و نسب مٹا دی

صلاح و امن اور آشتی کی بشر کو اِک راہِ نو دکھا دی

 

سلام اُن ﷺ پر کہ جن سے انساں کو درسِ انسانیت ملا ہے

سلام اُن ﷺ پر کہ جن کی آمد سے آدمی کا شرف بڑھا ہے

 

سلام لاکھوں سلام اُن پر کہ جن کی اَزواج سب مطہر

سلام لاکھوں سلام اُن پر ہیں آل میں جن کی ماہ و اختر

 

سلام لاکھوں سلام جتنی ہوئی ہیں اولادیں شاہِ دیں کی

کہ جن میں زینبؓ بھی ہیں، رقیہؓ بھی، اُمِّ کلثومؓ و فاطمہؓ بھی

 

نرینہ اولادِ سیدالمرسلیں ﷺ پہ بھی ہو سلام بے حد

سلام لاکھوں سلام ان پر بنے تھے بچپن میں جن کے مرقد

 

سلام لاکھوں سلام اُن ﷺ پر کہ جن کے اصحابؓ ہیں ستارے

حیات ہے ظلمتوں کا صحرا تو وہ ہیں سب نور کے منارے

 

سلام لاکھوں سلام اُن پر کہ جن کی اُمت میں اولیاء ہیں

سلام لاکھوں سلام اُن پر کہ جن کے دامن میں اصفیاء ہیں

 

سلام اُن ﷺ پر کہ جن کے صدقے قلوب و اَذہان میں چمک ہے

سلام ان ﷺ پر طفیل جن کے دلوں میں ایمان کی لپک ہے

 

بفیضِ ختم الرسل ﷺ مجھے سلسبیل نوریں سے واسطہ ہے

عزیزؔ احسن انہی کے صدقے مجھے ثنا کا ہُنر ملا ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

گھڑی مڑی جی بھر آوندا اے ۔ پنجابی نعت
یوں اپنے واسطے بخشش کا التزام کیا
جو عرش کا چراغ تھا میں اس قدم کی دھول ہوں
نبی ﷺ کا نام دل میں ضو فشاں ہے اب جہاں میں ہوں
بے مثل ہے کونین میں سرکارؐ کا چہرہ
لکُّھوں میں نعتِ شاہِ دو عالم ﷺ بہر زماں
نہیں ہے دم خم کسی میں اتنا، ثنا نبیؐ کی جو لکھے کامل
سعدیؒ کے صدقے
آمنہ بی کا پسر، راج کنور، لختِ جگر
مدینے سے ہٹا کر دھیان اپنا