اردوئے معلیٰ

سنور کر پھر گئی قسمت اِسی مردِ تن آساں کی

سرِ منزل پہنچ کر گم ہوئی منزل مسلماں کی

 

قسم کھانے کے قابل ہے وہ سیرت ماہِ کنعاں کی

قسم کھا کر میں کہتا ہوں اسی کے چاک داماں کی

 

عجب قصہ ہے دونوں کی پریشانی نہیں جاتی

اِدھر قلبِ پریشاں کی، اُدھر زُلفِ پریشاں کی

 

ہمیں معلوم ہے سب کچھ ہمیں کیا اعتبار آئے

رقیبِ رو سیہ نے تو ہمیشہ دُون کی ہانکی

 

تری رحمت کے بل بوتے پہ سرزد ہو گئے مجھ سے

الٰہی لاج رکھ لے حشر کے دن میرے عصیاں کی

 

مہِ یثرب سے میرے ہو گئے کون و مکاں روشن

اسی روئے زمیں تک روشنی ہے ماہ کنعاں کی

 

ترے دیوانے بیچارے گزرگاہِ محبت میں

خبر لیں چاک دل کی یا خبر لیں چاک داماں کی

 

نظرؔ نیچی کیے چلتا رہا میں عمر بھر اپنی

سنی جب سے حکایت ہے نگاہِ فتنہ ساماں کی

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات