اردوئے معلیٰ

Search

سوئے اقصیٰ ہے ہوا جاری سفر آج کی رات

سارے نبیوں کی ہے آقا پہ نظر آج کی رات

 

رب سے محبوب ملے دوریئ قوسین سے جب

مٹ گیا فاصلۂ نور و بشر آج کی رات

 

غل ہے افلاک پہ آئے گا وہ مہمان حسیں

تب ہی گہنایا سا لگتا ہے قمر آج کی رات

 

سن کے رودادِ سفر اُن کے ہیں اوسان خطا

دشمنِ دین پریشاں ہیں مگر آج کی رات

 

کیسے کر لیتے یقیں وارثیؔ وہ منکرِ دین

منتظر کب سے ملائک ہیں ادھر آج کی رات

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ