اردوئے معلیٰ

Search

سُنت کا ترے رخ پہ اگر نور نہیں ہے

محبوب کو یہ عاشقی منظور نہیں ہے

 

کس منہ سے کرتا ہے دعویٰء غلامی

آقا کی محبت سے جو مجبور نہیں ہے

 

باطن میں نہیں پائے گا تو عشق کی رونق

ظاہر تیرا سُنت سے جو معمور نہیں ہے

 

تو خوش نہیں کرتا ہے جو سرکار کے دل کو

جب ہی تو تیرا قلب بھی مسرور نہیں ہے

 

غفار کو ناراض جو کرتا ہے مسلسل

ہے اس کی علامت کہ وہ مغفور نہیں ہے

 

محفوظ وہ عصیاں سے بھلا کیسے رہے گا

جو جائے معاصی ہی سے مفرور نہیں ہے ​

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ