اردوئے معلیٰ

Search

نظر میں جلووں کی جھلملاہٹ پکارتی ہے

کہ یادِ طیبہ نصیب میرا سنوارتی ہے

 

سب انبیا کا جواب سن کر، پئے شفاعت

شفیعِ محشر کو نسلِ آدمؑ پکارتی ہے

 

ہوائے طیبہ کی چارہ سازی ہر اک بھنور میں

مرے سفینوں کو ساحلوں پر اتارتی ہے

 

شبیہِ گنبد کو دیکھ کر آنکھ نم ہوئی ہے

یہی نمی تو ہر ایک منظر نکھارتی ہے

 

وہ چشمِ مشکل کشا مری آخری تمنا

جو حشر میں امتی کو پُل سے گزارتی ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ