سید فخرالدین بلے , ایک منفرد تخلیقی شخصیت

سید فخرالدین بلے

سید فخر الدین بلے ولادت : 15۔دسمبر1930.(ہاپوڑ)میرٹھ ,وفات : 28۔جنوری2004(ملتان)پنجاب
مصورانہ شاہکار : آکاش مغل
———-
کچھ لوگ بڑے پیدا ہوتے ہیں ۔کچھ لوگ اتفاقات سے بڑے ہوجاتے ہیں اور کچھ لوگ اپنی محنت و ذہانت سے بڑے بنتے ہیں۔ ان میں سے کوئی ایک سبب ہی کسی کوبڑابنانے کےلئے کافی ہوتاہے لیکن جہاں ان تینوں اسباب کاامتزاج ہوجائے ،وہاں بڑا آدمی کس کمال کا ہوگا؟اس کاایک عکس سید فخرالدین بلے کی شخصیت میں دیکھا جاسکتاہے۔ جوایک بڑے علمی اور تہذیبی خانوادے میں پیداہوئے۔حسن اتفاقات نے پروان چڑھایااور محنت و ریاضت نے منزل تکمیل تک پہنچادیا۔
انسانی شخصیت قدرت کاتخلیقی معجزہ ہے،جس میں امکانات و تنوعات کے ایسے رنگ و آہنگ ،اتنے صفاتی زاوئیے اور اس قدر معنوی پہلو سمودئیے گئے ہیں کہ ان کا تصور و ادراک ممکن نہیں۔کسی شخصیت میں کسی ایک صفت کی تجلی ہی اسے کامرانی کاستارہ بناسکتی ہے لیکن جہاں جہت در جہت اور پہلو بہ پہلوذات و صفات کی کہکشاں سجی ہو،اس کی رنگارنگی لفظوں میں مصور نہیں کی جاسکتی۔ فخرالدین بَلّے بھی شخصیتوں کے اس قبیلے سے تعلق رکھتے تھے،جن
کی خصوصیات و معمولات کی بوقلمونی ان کے شخصی خدوخال کا ایک دلکش خاکہ ابھارتی ہے۔
بَلّے صاحب سے میری شناسائی چھے دہائیوں تک پھیلی ہوئی ہے۔ میں نے اس ماہتاب کو طلوع ہوکر چودھویں کاچاند بنتے اور غروب ہوتے دیکھا ہے۔تقسیم ہند کی مہاجرت کے نتیجے میں بہاول پور ہماری پناہ گاہ تھا،میں اپنی بیوہ والدہ کے ہمراہ ایک عزیز سے ملنے کے لئے کراچی جاتے ہوئے یہاں رکااور اس
سرزمین نے پاوں پکڑ لئے۔ اور بَلّے صاحب کا خاندان اپنے عزیزوں کی وجہ سے یہاں آیا ، جو قیام پاکستان سے بہت پہلے بہاول پور میں مقتدر تھا۔ ہم نے جب اپنے کیرئیر کا آغاز کیا تو میرا بچپن تھا اور بَلّے صاحب کی جوانی۔ اسسٹنٹ انفارمیشن افسر کے طور پر بہاول پور سے سرکاری ملازمت
کا آغازکیا اور ڈائریکٹر جنرل انفرمیشن و تعلقات عامہ کی حیثیت سے ریٹائر ہوئے۔ نیشنل سینٹر اور آرٹس کونسل کی اضافی ذمے داریاں بھی اس کیرئیرکا حصہ رہیں ، جن کی ادائیگی میں بلے صاحب کی ذات و صفات کی مختلف پرتیں اور جہتیں اس بے پناہی سے سامنے آئیں کہ وہ اس شعبے کی ایک مثالی شخصیت بن گئے۔
تعلقات عامہ ۔۔۔ حکومت کا ایک بڑا اہم اور منفرد محکمہ ہے ، جسے سرکاری امور غیر سرکاری انداز میں انجام دینے ہوتے ہیں اور حکومتی تشہیر کا مشکل فریضہ ، صحافیوں جیسے مشکل لوگوں سے ادا کرانا ہوتا ہے۔ تعلقات عامہ میں کامیابی کاانحصار اس معیار پر ہے کہ کوئی افسر کس طرح اپنی صلاحیت سے اہل صحافت کو رام کرکے اپنا سرکاری کام کس طرح نکلواسکتاہے۔۔
———-
یہ بھی پڑھیں : معروف شاعر ” آنس معین ” کا یوم ولادت
———-
بَلّے صاحب پیدائشی طور پر تعلقات عامہ کے خوبصورت سانچے میں ڈھلے ہوئے ایک سحرکار آدمی تھے، جو صحافیوں کے دلوں میں اترکے ہر مشکل آسان کرنے کاہنر بھی جانتے تھے اور انہیں ارباب بست و کشاد سے برابری کی بنیاد پر دلائل کے ساتھ اپنا موقف منوانے کا زبردست ملکہ بھی حاصل تھا۔اسی حوالے سے دوران ملازمت کئی شہروں میں تعینات رہے اور جہاں بھی رہے ،داستاں چھوڑ آئے۔ بَلّے صاحب اپنی ذات میں ایک کائنات تھے۔بو قلموں ، گوناگوں
اور رنگا رنگ۔ بیک وقت ایک کرشمہ ساز افسر ، ایک عظیم انسان ، ایک پختہ کار شاعر ، ایک برق رفتار نثّار ، ایک غیر جانب دار محقق ، ایک ہمہ جہت
دانشور، ایک تیزطرار صحافی ، ایک جدت طراز موسیقی نواز اورایک فعال ادبی اور ثقافتی سفیر۔
قدرت نے انہیں عجیب رنگ و آہنگ سے تراشا تھا اور ان کے رگ و پے میں بجلیاں سی بھر دی تھیں ۔ہردم کچھ نہ کچھ کرنے کے لئے بے قرار! ہر لمحہ کوئی نیا فیصلہ ، نیامنصوبہ ، نیاراستہ، نئے مرحلے ، نئے اقدام ، نئے چیلنج ،نئی فکر ، نئی مہم ،نئی منزل ۔
———-
ایک چکر ہے مِرے پاوں میں زنجیر نہیں۔
———-
تعلیم و تربیت ، تہذیب و تمدن ، علم و فن ، تجربہ و مشاہدہ ، ذہانت و مہارت اور ریاضت نے ان کے صفاتی خدوخال اور زندگی کے احوال کوایسے دھنک رنگ سانچے میں ڈھالا تھا ، جس کی تصویر سب کی جیسی بھی تھی اور سب سے الگ بھی ۔۔ خوش اندامی ، خوش اخلاقی ، خوش لباسی ، خوش دلی اور خوش فکری
کا وہ ایک دلکش پیکر تھے ۔سراپا خود دار۔سراپا انکسار۔جرات و جسارت کے کوہسار ۔فراست و فطانت کی آبشار۔ رکیں تو لالہ زار اور چلیں تو باد بہار۔
میرے نزدیک بَلّے صاحب بنیادی طور پر شاعر تھے مگر ان کی بیشتر تخلیقی توانائی تعلقاتِ عامہ اور ابلاغیات نے لوٹ لی۔اس کے باوجود انہوں نے ایک قادرالکلام شاعر کے طور پرخود کومنوایا۔ ان کی شاعری روایت اور جدت کادلکش اتّصال تھی۔انہوں نے زندگی کو جس جس زاوئیے اور جہت سے دیکھا اور تہذیب و ثقافت اور معاشرت و انسانیت کا جو گہرا مطالعہ ، مشاہدہ اور تجربہ کیا، اسے اپنی شاعری کے پیکر میں ڈھال دیا۔کہیں کہیں ان کے اشعار مشکل اور دقیق محسوس
ہوتے ہیں ،اس کی وجہ ان کاعلم و فن اور تحقیق و تدقیق ہے،جس سے وہ اپنی نثرکے ساتھ اپنی شاعری کو بھی ثمرمند کرناچاہتے تھے۔ایک چیز جوان کی شعری تخلیق کوندرت اور انفرادیت عطا کرتی ہے ، وہ ان کاعارفانہ اور متصوفانہ رنگ ہے ، جوکہیں ظاہر اور کہیں بین السطور اپنی چھب دکھلاتا ہے ۔پھران کے ہاں رومانویت روایتی دل کشی کے ساتھ روحانی تجلی کاایک عجیب جگمگا رکھتی ہے، جو لطف بھی دیتی ہے اور سکون و طمانیت بھی۔
———-
یہ بھی پڑھیں : ماہنامہ ادب لطیف کی مدیر اعلیٰ صدیقہ بیگم کا یومِ وفات
———-
ان کی ابلاغی شخصیت کاتفصیلی مطالعہ تو نظر آتاہے لیکن ان کی شعری شخصیت کاتفصیلی مطالعہ ہم پرواجب ہے۔شاید ابھی ان کا پورا کلام بھی دستیاب نہیں ہوسکا ،تاہم ریزہ ریزہ جو کچھ جمع کیا جاسکا ،اس سے ان کے کمال فن کی جہتوں ،زاویوں،وسعتوں اور جدتوں کا بآسانی اندازہ ہوسکتاہے۔حاصل مطالعہ کے طور پر ان کے چند اشعار یہاں پیش کر رہاہوں ،جو ان کے شاعرانہ جلال و جمال کے آئینہ دار ہیں۔
———-
خلا کی تسخیر ہو رہی ہے
زمیں پہ انسان مر رہا ہے
———-
وہی تو ہوں میں کہ جس کے وجود سے پہلے
خود اپنے رب سے فرشتوں نے اختلاف کیا
ازل سے عالم موجود تک سفر کرکے
خود اپنے جسم کے حجرے میں اعتکاف کیا
———-
الفاظ و صوت و رنگ و تصور کے روپ میں
زندہ ہیں لوگ آج بھی مرنے کے باوجود
———-
ہر سنگ بھاری ہوتا ہے اپنے مقام پر
انساں خلا میں پہنچا تو پاسنگ رہ گیا
———-
میں نے گردوں پہ خون دیکھاہے
لوگ کہتے ہیں پو پھٹی چپ چاپ
———-
میں جانتا ہوں مگر تو بھی آئینہ لے کر
مجھے بتا کہ مِرا انتخاب کیسا ہے
———-
کھڑا ہوں جادہ ء حیرت پہ آج بھی تنہا
کبھی تو کوئی مسافر اِدھر سے گزرے گا
———-
یہ بھی پڑھیں : ممتاز ادیب اور شاعر شہاب دہلوی کا یوم وفات
———-
ہنگامہ ہائے کارگہِ روز و شب نہ پوچھ
اتنا ہجوم تھا کہ میں تنہا سا رہ گیا
اتنا بڑھا بشر کہ ستارے ہیں گرد راہ
اتنا گھٹا کہ خاک پہ سایہ سا ر ہ گیا
———-
سر اٹھا کر زمیں پہ چلتا ہوں
سر چھپانے کو گھر نہیں ، نہ سہی
———-
اٹھائے پھرتا ہوں سر اپنے تن کے نیزے پر
ہوئی ہے تنگ زمیں مجھ پہ کربلا کی طرح
———-
مٹی اڑی تو اپنی حقیقت ہوئی عیاں
جھونکا ہوا کا میرا پتا دے گیا مجھے
———-
اپنی کتاب زیست پہ تنقید کے لئے
آخر میں چند سادہ ورق چھوڑ جاؤں گا
———-
شہر کے محتسب مجھے بھی دِکھا
ایسے دامن جو داغ دار نہیں
———-
آگ پانی میں ہے کیا فرق کہ ہم سب کے بدن
کبھی بارش میں ، کبھی دھوپ میں نم ہوتے ہیں
———-
یوں لگی مجھ کو خنک تاب سحر کی تنویر
جیسے جبریل نے میرے لئے پَر کھولے ہیں
———-
اس مٹی کی ہر شے پر ہے ،اس مٹی کا قرض
میرے لئے ہے فرض سے پہلے اس مٹی کاقرض
———-
ادبا او ر شعرا اپنے اپنے دور میں قدر ناشناسی کے عموماً شکوہ سنج رہے ہیں ،بَلّے صاحب نے محسوس کیا ہو یا نہیں ،میں محسوس کرتا ہوں کہ زمانے نے ان کے غیر معمولی اوصاف سے کماحقہ انصاف نہیں کیا۔کیسے کیسے عظیم المرتبت اور نابغہ روزگار لوگوں نے انہیں کیسا کیسا خراج تحسین پیش کیا ہے۔
———-
فراق گورکھپوری نے کہا سید فخرالدین بلے رنگوں کے بجائے الفاظ سے تصویریں بنانے کا ہنر جانتے ہیں۔ جوش ملیح آبادی نے کہا سید فخرالدین بلے کے کلام میں دریا کی روانی اور جذبوں کی فراوانی ہے۔تاریخ ،ادب اور تصوف کا مطالعہ ان کے کلام میں بولتا ہوا اور سوچ کے در کھولتا ہوا دکھائی دیتا ہے۔
———-
بابائے اردو مولوی عبدالحق نے کہا کہ سید فخرالدین بلے کی نظم ہو یا نثر ،اس میں کوئی نقص نکالنا محال ہے۔
———-
ڈاکٹر وزیر آغا نے کہا کہ تصوف پر ان کی نظر اتنی گہری ہے کہ آپ بلا تکلف انہیں اس سلسلے میں ایک اہم اتھارٹی قرار دے سکتے ہیں ۔
———-
جگن ناتھ آزاد نے کہا کہ سید فخرالدین کی شعری تخلیقات پڑھنے یاسننے کے بعد برسوں تک ان کے سحر سے آزاد ہونا مشکل ہے۔
———-
میرزا ادیب نے کہا کہ ہرملاقات میں ان کی شخصیت کا ایک نیا رخ سامنے آیا، میں اس کثیرالجہت شخص کو پورے اعتماد کے ساتھ علم و ادب کی آبرو قرار دے سکتا ہوں ۔
———-
انتظار حسین نے کہا کہ فخرالدین بلے بڑی متحرک قسم کی شخصیت تھے۔ انہوں نے ملک کے تہذیبی فروغ کے لئے خود کو وقف کر رکھا تھا ۔پھر ساتھ میں شاعری بھی کی،جتنی شاعری کی،اس سے انصاف کیا۔اس پر علمی کام مستزاد۔
———-
پریشان خٹک نے کہا کہ فخرالدین بلے ادب کی دیو قامت شخٰصیت کا نام ہے۔
———-
ڈاکٹر عاصی کرنالی نے کہا بلے ایک شخص کا نہیں،ایک یونیورسٹی اور ایک تہذیبی ادارے کانام ہے۔وہ بے کراں علوم و فنون کے حامل تھے۔
———-
افتخارعارف نے کہا کہ بلے صاحب ہمارے زمانے کے یگانہ روزگار شخصیتوں میں سے تھے۔جن کی ذات گرامی بے شمار کمالات کی جامع تھی۔
———-
ان معرکۃ الآرا آرا اور تبصروں کے باوجود بلے صاحب کو مسند ادب و فن پر شہرت و مقبولیت کا وہ مقام بوجوہ نہیں دیا جاسکا ، جو ان کے شایان شان تھا۔ شاید اس کے لئے عہد حاضر میں ذاتی جمال کے علاوہ کچھ اور کرشماتی احوال اور مال و مقال درکار ہوتے ہیں۔ملازمت کے آغاز سے لے کر اس کے انجام تک اور ملازمتی فراغت سے سوئے عدم مراجعت تک بلے صاحب سے میرا مخلصانہ اور محبانہ تعلق سدا برقرار رہا اور کوئی غلط فہمی یا ناراضی کبھی اس میں کوئی رخنہ پیدا نہ کرسکی ۔پنجاب اسمبلی کے اجلاسوں کے سلسلے میں لاہور قیام ہوتا توان سے گھنٹوں گپ شپ رہتی۔پنجاب کے سابق درویش وزیراعلیٰ غلام حیدر وائیں ہمارے مشترکہ دوست تھے۔ مسلم لیگی میگزین مسلم لیگ نیوز ، نظریاتی لٹریچر اور تشہیری حکمت عملی کے حوالے سے مسلم لیگ ہاوس میں وائیں صاحب کاکمرہ ہمارے مشترکہ جنون کامحورتھا۔وزارت اعلیٰ پرفائز ہونے کے باوجود ایک کارکن کی طرح ان کاخشوع و خضوع بھی قابل تحسین ہوتاتھا اور بلے صاحب کاانہماک بھی قابل دید ۔
دوستوں کے لئے یہ بات ہمیشہ خوشگوار حیرت کاباعث رہی کہ بلے صاحب نے عمر،بیماری اور نقاہت کو کبھی فعالیت پر حاوی نہیں ہونے دیا۔جب تک بس چلا پریشانیوں کوٹہلاتے رہے اورزندگی کاساغر چلاتے رہے۔ ایک روز وقت طے کرکے میرے پاس بہاول پور تشریف لائے۔کہنے لگے اس دفعہ میری آمد خاص الخواص ہے۔میں نے کہا عام العوام کب ہوتی ہے؟۔میرے لئے ہمیشہ خاص ہوتی ہے۔فرمانے لگے مذاق چھوڑئیے ۔میں ایک انتہائی سنجیدہ مسئلے پر بات کرنے آیاہوں۔۔آپ کو
معلوم ہے کہ میرے تعلقات ملک بھر میں پھیلے ہوئے ہیں مگر میں نے سارے پاکستان میں اس کے لئے آپ کاانتخاب کیا ہے۔ان کی گفتگو میں تجسس ڈرامائی شکل اختیار کررہاتھا ۔
———-
یہ بھی پڑھیں : نامور شاعر سید فخر الدین بلے (علیگ) کا یوم وفات
———-
آپ جانتے ہیں کہ میں نے قافلہ کے نام سے ایک ادبی تنظیم بنائی تھی ،لاہور میں ادبی پڑاؤ کےعنوان کے تحت میرے گھر پر برس ہابرس تک اس کی تقریبات ہوتی رہی ہیں ۔جن میں لاہور ہی کے نہیں بلکہ باہر سے آنے والے نامور ادیب ،شاعر اور نقاد شریک ہوتے رہے ہیں۔میرے لاہور چھوڑنے کے بعد یہ سلسلہ ٹوٹ گیا ہے۔میں چاہتا ہوں آپ بہاول پور میں اپنے گھر اس سلسلے کا آغاز کریں ۔یہ کام باقاعدگی سے صرف آپ ہی کرسکتے ہیں ۔میں نے کہا آپ نے انکار یا فرار کی گنجائش ہی نہیں چھوڑی ۔آپ کی اس خواہش کی تکمیل میرے لئے اعزاز ہوگا۔چنانچہ اسی شام میرے گھر پر بہاول پور کے منتخب نامور شعرا اور ادبا کااجلاس ہوا اور بلے صاحب کی موجودگی میں یہ طے ہواکہ ہر ماہ کی سولہ تاریخ کوبعد نماز مغرب میرے گھر پرادبی پڑاوہوگا اور اس کااہتمام ہماری تنظیم مجلس ثقافت پاکستان کیا کرے
گی۔وہ دن ہے اور آج کادن ادبی پڑاو برس ہا برس سے بلاناغہ جاری ہے۔جس سے بلے صاحب کی یاد بھی تازہ ہورہی ہے اور یہ پڑاواب بہاول پور کی ایک مستقل روایت کی حیثیت بھی اختیار کرگیا ہے۔یوں سید فخرالدین بلے بہاول کی سرزمین میں تہہِ خاک آسودہ ہیں مگر بہاول پورکے ادبی آسمان پر بدستور تابندہ ہیں۔
سید فخرالدین بلے صاحب کی شخصیت ، فن اور خدمات سے متعلق مشاہیر اور احباب نے محبتوں کے جو پھول اپنی تحریروں کی صورت میں ان کی نذرکئے ، انہیں میں نے سید فخرالدین بلے۔ایک داستان ۔ ایک دبستان کے عنوان کے تحت ایک گلدستے کی شکل دے دی ہے۔ ادب دوست تعاون نہ کرتے تو خوبصورت مضامین و آراء کو کتابی شکل میں مدون کرنا آسان نہ ہوتا۔ مجھے یقین ہے کہ اس کوشش کے نتیجے میں بلے صاحب کا کلام ، کام اور مقام تاریخ ادب و ابلاغیات میں ہمیشہ کے لئے محفوظ ہوجائے گااور ممکن ہے کہ یہ کاوش ان پر تحقیق کانیادروازہ کھول دے۔
———-
یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ