اردوئے معلیٰ

Search

سیرت کے نور آپ نے جن کو دِیئے حضور !

اُن کے نقوشِ پا پہ ہیں روشن دِییے حضور !

 

در اُمَّتانِ سابِقہ گر کا مِلے حضور !

اس کو بھی فیض آپ کے در سے مِلے حضور !

 

جبریلِ حرف عرشِ ثنا کو نہ پا سکا

در ماندہ ہے عقابِ تخیّل ترے حضور ”

 

واللّٰہ عزیزِ مِصرِ کمالاتِ کل ہیں آپ

اور آپ جانِ یوسفِ کنعاں مِرے حضور !

 

ہیں آپ زیرِ سایۂِ ” وَاللّٰہُ یَعصِمُک”

کیا گرمیِٔ فریبِ عدو کر سکے حضور !

 

کشتِ اَمَل ہے خشک تو قحطِ عَمَل میں ہم

بارانِ خیر اک ذرا برسائیے حضور !

 

درپیش پھر سے معرکۂِ بَدر ہے نیا

پِھر نُصرتِ خدا کی دعا کیجیے حضور !

 

میرے گلے میں ڈال لے بانہیں خود آ کے خلد

میت جو میری آپ کے در سے اُٹھے حضور !

 

پڑ جائے گر نگاہِ منوّر بہ نورِ حق

قلبِ سیاہ آئِنہ صورت بنے حضور !

 

پِھر بخش دیں تصلُّبِ رضوی بہ چشمِ فیض !

کچھ سنّی ہوتے جاتے ہیں اب پِلپِلے حضور !

 

بحرِ بسیطِ عفو سے قطرہ عطا کریں

نارِ گناہ سے نہ معظمؔ جلے حضور !

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ