اردوئے معلیٰ

بچّہ ھے، اس کو یُوں نہ اکیلے کفن میں ڈال

ایک آدھ گُڑیا، چند کھلونے کفن میں ڈال

 

نازک ھے کونپلوں کی طرح میرا شِیرخوار

سردی بڑی شدید ھے، دُھرے کفن میں ڈال

 

کپڑے اِسے پسند نہیں ھیں کُھلے کُھلے

چھوٹی سی لاش ھے، اِسے چھوٹے کفن میں ڈال

 

دفنا اِسے حُسَین کے غم میں لپیٹ کر

یہ کربلائی ھے، اِسے کالے کفن میں ڈال

 

ننّھا سا ھے یہ پاؤں، وہ چھوٹا سا ھاتھ ھے

میرے جگر کے ٹکڑوں کے ٹکڑے کفن میں ڈال

 

مُجھ کو بھی گاڑ دے مرے لختِ جگر کے ساتھ

سینے پہ میرے رکھ اِسے، میرے کفن میں ڈال

 

ڈرتا بہت ھے کیڑے مکوڑوں سے اِس کا دل

کاغذ پہ لکھ یہ بات اور اِس کے کفن میں ڈال

 

مٹی میں کھیلنے سے لُتھڑ جائے گا سفید

نیلا سجے گا اِس پہ سو نیلے کفن میں ڈال

 

عیسٰی کی طرح آج کوئی معجزہ دکھا

یہ پھر سے جی اُٹھے، اِسے ایسے کفن میں ڈال

 

سوتا نہیں ھے یہ مری آغوش کے بغیر

فارس ! مُجھے بھی کاٹ کے اِس کے کفن میں ڈال

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات