اردوئے معلیٰ

Search

شانِ سرکارِ بطحیٰ بڑی چیز ہے

دونوں عالم کا آقا بڑی چیز ہے

 

میری لوحِ جبیں کی یہ قسمت کہاں

اُن کی خاکِ کفِ پا بڑی چیز ہے

 

تاجدارانِ عالم کے کیا مرتبے

اُن کی گلیوں کا منگتا بڑی چیز ہے

 

راج والوں کی نعمت کوئی شے نہیں

کملی والے کا ٹکڑا بڑی چیز ہے

 

چاند تاروں میں ایسے اُجالے کہاں

اُن کی جالی کا پردا بڑی چیز ہے

 

ان کے در کی حضوری کا کیا پوچھنا

ان کے در کی تمنا بڑی چیز ہے

 

اے منورؔ تجھے اور کیا چاہیے

مصطفیٰ کا سہارا بڑی چیز ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ