اردوئے معلیٰ

Search

شکرِ خُدا کہ نعت نگہ دارِ حرف ہے

ورنہ تو حرف خود ہی سُبک سارِ حرف ہے

 

واللہ ، تیرے نام سے ہے آبروئے نطق

واللہ ، تیری نعت سے پندارِ حرف ہے

 

تُو خامہ و بیاں کی ہے آخری طلب

تُو ہی کرم نواز و شرَف بارِ حرف ہے

 

اِک نام ہے جو کھولتا ہے بابِ معرفت

ورنہ تو سب حجاب ہے ، دیوارِ حرف ہے

 

کچھ یوں ہے لفظِ حمد پہ تعلیقِ حرفِ مِیم

جیسے کہ رَأسِ اَوج پہ دستارِ حرف ہے

 

جو دائرہ ہے حیطۂ تمدیحِ ناز کا

اِس سے بروں تو منظرِ ادبارِ حرف ہے

 

’’ غالب ثنائے خواجہ بہ یزداں گزاشتیم ‘‘

مقصودؔ میرا بھی یہی اقرارِ حرف ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ