شگفتہ، دلنشیں، سادہ رواں ہے

شگفتہ، دلنشیں، سادہ رواں ہے

یہ اپنا اپنا اندازِ بیاں ہے

 

لگی ہے آگ، شعلے ہیں، دھواں ہے

چمن میں میرے خیریت کہاں ہے

 

خدنگِ ناز اُدھر اور تیغِ ابرو

اِدھر دونوں کی زد پر میری جاں ہے

 

ذرا میں خوش، ذرا میں ہے کبیدہ

بہت نازک مزاجِ گل رخاں ہے

 

لگا دے آگ جب چاہے دلوں میں

خطیبِ شہر وہ آتش زباں ہے

 

ہے رودادِ ستم اس کی یہ اصلاً

بظاہر میرے غم کی داستاں ہے

 

اچک لیتی جہنم مجھ کو لیکن

خدا کی شانِ رحمت درمیاں ہے

 

ہماری داستاں ماضی کی سن کر

ہر اک انگشت حیرت در دہاں ہے

 

ضعیف العمر میں ہُوں، دل کہاں ہے

کہ ہر اک عزمِ دل، عزمِ جواں ہے

 

بتا دیتا ہے چہرہ آدمی کا

نظرؔ غمگیں ہے دل یا شادماں ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ