اردوئے معلیٰ

شہرطیبہ کے دروبام سے باندھے ہوئے رکھ

شہر طیبہ کے در و بام سے باندھے ہوئے رکھ

میں ہوں جیسام جھے اس نام سے باندھے ہوئے رکھ

 

میں بھی ہوں اے مرے آقا ترا زندانی عشق

اپنے قیدی کو اسی دام سے باندھے ہوئے رکھ

 

مری آنکھوں سے برستے ہوئے ان اشکوں کو

دل میں برپا کسی کہرام سے باندھے ہوئے رکھ

 

یہ چمکتا ہوا سورج مری خواہش میں نہیں

تو مجھے اپنی کسی شام سے باندھے ہوئے رکھ

 

میں نہیں چاہتا آسودہ دنیا ہونا

بس مجھے راحت انجام سے باندھے ہوئے رکھ

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ