اردوئے معلیٰ

شہرِ رسولِ پاک میں جانا نصیب ہو

پھر عمر بھر وہیں کا ٹھکانہ نصیب ہو

 

خاموشیوں کا لہجہ ہو ، احساس کی زباں

یوں ان کو دل کا حال سنانا نصیب ہو

 

بانہوں میں مجھ کو رحمتِ آقا سمیٹ لے

دامانِ عاطفت میں سمانا نصیب ہو

 

اے میرے خواب! چل مجھے لے کر اُسی طرف

دل کہہ رہا ہے ان کا زمانہ نصیب ہو

 

رکھ کر درِ رسول پہ یہ پائمال دل

سویا ہوا نصیب جگانا نصیب ہو

 

جس کے ہر آئِنے میں ہو عشق نبی کا عکس

یارب ! ہمیں وہ آئنہ خانہ نصیب ہو

 

ماہ و نجوم مجھ سے چمک مانگنے لگیں

یوں مجھ کو خاکِ در سے نہانا نصیب ہو

 

سینے پہ مصطفیٰ کے قدم مہربان ہوں

اک خواب مجھ کو اتنا سہانا نصیب ہو

 

میلادِ مصطفیٰ کا کروں گھر میں اہتمام

خوشیوں کے قافلے کو بلانا نصیب ہو

 

رہتے ہیں جو حضور کے روضے کے ارد گرد

اُن طائروں کو دانا کھلانا نصیب ہو

 

جز عشقِ مصطفیٰ نہ رہے کچھ جہان میں

اے نورؔ مجھ کو ایسا زمانہ نصیب ہو

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات