اردوئے معلیٰ

Search

ظُلمتوں نے غُبار ڈالا ہے

تیری ضو نے نکھار ڈالا ہے

 

کوئی شکوہ نہیں ہے غیروں سے

’’مجھ کو اپنوں نے مار ڈالا ہے‘‘

 

تُو نے آ کر اُسے جِلا بخشی

جس کو دُنیا نے مار ڈالا ہے

 

مر کے پہنچا ہوں آپ کے در پر

بارِ عصیاں اُتار ڈالا ہے

 

دل کی دنیا کو میرے آقا کی

اِک نظر نے سنوار ڈالا ہے

 

پیکرانِ غرور کے دل سے

زنگ سارا اُتار ڈالا ہے

 

عاشقوں کی یہ آزمائش تھی

اُس نے پھولوں میں خار ڈالا ہے

 

کب کے بگڑے معاشروں کو شہا!

تُو نے آ کر سُدھار ڈالا ہے

 

بس گلے میں جلیلِ رُسوا کے

تُو نے عزت کا ہار ڈالا ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ