عبادت ہو ادا کچھ اِس ادا سے

عبادت ہو ادا کچھ اِس ادا سے

کہ جیسے ہم کلامی ہو خدا سے

خدا ہم کو ہر اک شر سے بچائے

ہمیں محفوظ رکھے ہر بلا سے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

قطرہ قطرہ ہمیں ترسائے نہ کم کم برسے
حسینؑ گلشن مذہب کا ایک گل ہے نفیس
گھر کے باہر بھی ہر اک شخص کسی دکھ میں ہے
مقامِ مصطفیٰؐ، اللہ ہی اللہ
محبت کا وہ بحرِ بیکراں ہیں
رنج و آلام جب ستائیں گے
حضورؐ بندۂ عاجز گناہگار ہوں میں
نگاہِ ملتفت آقاؐ مرے مجھ پر سدا رکھنا
دل و جاں میں قرار آپؐ سے ہے
وہ خوش قسمت ہیں جن کی آپؐ کے در تک رسائی ہے