اردوئے معلیٰ

Search

عجب روح پرور فضائے مدینہ

ہے کتنی مُعطّر ہوائے مدینہ

 

کہ سانسیں بھی اپنی مہکنے لگی ہیں

چلی آج شاید ہوائے مدینہ

 

اسے دھوپ غم کی ستائے تو کیسے

تنی جس کے سر پر رِدائے مدینہ

 

وہی مثلِ مہتاب چمکے جہاں میں

کرے جن کو روشن ضیائے مدینہ

 

زمانے کی خوشیاں انہی کا مُقدّر

کہ دامن میں جن کو چھپائے مدینہ

 

مبارک سفر ہے تو منزل حسیں ہے

چلا قافلہ جو برائے مدینہ

 

کہاں بادشاہوں کا ایسا مُقدّر

جہاں پر کھڑا ہے گدائے مدینہ

 

کرم کی نظر ہو جلیلِ حزیں پر

ہو اذنِ حضوری ، کہ آئے مدینہ

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ