اردوئے معلیٰ

عجزِ بیانِ حرف سے رنگِ ثنا سمیٹ

عجزِ بیانِ حرف سے رنگِ ثنا سمیٹ

لکنت نصیب شوق ! وفورِ عطا سمیٹ

 

آیا ہے شہرِ نازِ شفاعت میں عفو جُو

جا جا ! نویدِ عفو ہے ، فردِ خطا سمیٹ

 

چشمِ غمِ حیات میں رکھ اشکِ اندمال

کربِ دروں کے واسطے خاکِ شفا سمیٹ

 

کس زور پر ہیں اُن کی عطا کیش بارشیں

جُود و کرم سے بھیگے حروفِ دُعا سمیٹ

 

بے روک مل رہی ہے یہاں لایزال خیر

جتنا بھی چاہتا ہے دلِ بے نوا سمیٹ

 

طاعت کے التزام سے عظمت کا اوج تھام

حبِ رسولِ پاک سے رب کی رضا سمیٹ

 

تسکیں نواز شہر میں تسکینِ جاں تلاش

اُس بارگاہِ ناز سے غم کی دوا سمیٹ

 

پیشِ حضور ضبطِ تکلم ہے مقتضا

تابِ سخن کو طُول نہ دے ، التجا سمیٹ

 

عصرِ رواں کے شام و سحَر خود فریب ہیں

لازم ہے قرنِ خیر سے نقشِ بقا سمیٹ

 

شب زاد ! اپنی تیرہ نصیبی کی لے خبر

طلعت نواز شہر سے موجِ ضیا سمیٹ

 

مقصودؔ ، جو ثنا کے صلے کا مدار ہے

بزمِ خیال میں وہ کرم کی ردا سمیٹ

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ