اردوئے معلیٰ

Search

عجیب رہتا ہے اب تک خمار آنکھوں میں

بسا ہُوا ہے وہ شہرِ نگار آنکھوں میں

 

نظر میں رہتے ہیں کھِلتے ہُوئے وہ باغِ تمَر

کہ جیسے رہتی ہو تازہ بہار آنکھوں میں

 

اُنہیں زمانوں میں بستے ہیں زیست کے لمحے

رکھے ہُوئے ہیں وہ لیل و نہار آنکھوں میں

 

پسِ خیال اُترتے ہیں قافلے پیہم

قطار باندھے وہ ناقہ سوار، آنکھوں میں

 

کچھ اس طرح سے ہیں منظر نواز وہ منظر

فراق لاتا ہو جیسے قرار آنکھوں میں

 

چپک گئی ہے تصور کے شوخ چلمن سے

کبوتروں کی وہ رنگین ڈار آنکھوں میں

 

وہ تیرا گنبدِ خضریٰ، وہ تیرے مینارے

بصارتوں کی ہے گویا قطار آنکھوں میں

 

کھڑے ہُوئے تھے مواجہ پہ تیرے پروانے

خیال روکے ہُوئے تھا پھوار آنکھوں میں

 

کسی بھی سمت تصور کے خواب کھِلتے نہیں

عقیدتوں کا ہے یکسر حصار آنکھوں میں

 

اشارہ ملتے ہی چھلکے گا آنسوؤں کا ایاغ

رکھا ہُوا ہے کبھی کا اُدھار آنکھوں میں

 

تڑپ کے چوم لی حیرت کی سر زمیں مقصود

اُٹھا کے رکھ لیا سارا غُبار آنکھوں میں

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ