اردوئے معلیٰ

عرفانِ نعت ہے نہ ہی وجدانِ نعت ہے

لیکن ازل سے حسرت و ارمانِ نعت ہے

 

حکمِ خداے پاک ہے مدحت رسول کی

صلُّو علیہِ اصل میں اعلانِ نعت ہے

 

طاعت نبی کی طاعتِ ربِ عظیم ہے

الفت مرے کریم کی عنوانِ نعت ہے

 

ہر اک خیالِ عالی کو پایا ہے نعت میں

کتنا وسیع دیکھیے دامانِ نعت ہے

 

سب پھول محوِ رقص ہیں ، غنچے ہیں مشک بار

کیسا سدا بہار گلستانِ نعت ہے

 

ہر انتخابِ لفظ میں لازم ہے احتیاط!

حدِ ادب جناب یہ میدانِ نعت ہے

 

حسّان کے ہنر سے عطا ہو طریقِ نعت

درکار مجھ کو ویسا ہی سامانِ نعت ہے

 

خود خالقِ جہان ہے مداحِ اوّلیں

کتنی بلند و بانگ قمرؔ شانِ نعت ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات