اردوئے معلیٰ

عشق سچا ھے تو کیوں ڈرتے جھجکتے جاویں

عشق سچا ھے تو کیوں ڈرتے جھجکتے جاویں

آگ میں بھی وہ بُلائے تو لپکتے جاویں

 

کیا ھی اچھا ھو کہ گِریہ بھی چلے ، سجدہ بھی

میرے آنسو ترے پیروں پہ ٹپکتے جاویں

 

تُو تو نعمت ھے سو شُکرانہ یہی ھے تیرا

پلکیں جھپکائے بِنا ھم تجھے تکتے جاویں

 

دم ھی لینے نہیں دیتے ھیں خدوخال ترے

دم بہ دم اور ذرا اور دمکتے جاویں

 

توڑنے والے کسی ھاتھ کی اُمید پہ ھم

کب تلک شاخِ غمِ ھجر پہ پکتے جاویں ؟

 

شیرخواروں کے سے بےبس ھیں ترے عشق میں ھم

بول تو سکتے نہیں ، روتے بلکتے جاویں

 

اب تو ٹھہرا ھے یہی کام ھمارا شب و روز

دُور سے دیکھیں تجھے اور بہکتے جاویں

 

عشق زادوں سے گزارش ھے کہ جاری رھے عشق

بَکنے والوں کو تو بَکنا ھے ، سو بَکتے جاویں

 

اُس کے رُخسار بھی شعلوں کی طرح ھیں ، یعنی

دھک اُٹھیں تو بہت دیر دھکتے جاویں

 

فارس اک روز اِسی عطر سے مہکے گا وہ شخص

آپ چُپ چاپ فقط جان چھڑکتے جاویں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ