عشق سچا ھے تو کیوں ڈرتے جھجکتے جاویں

عشق سچا ھے تو کیوں ڈرتے جھجکتے جاویں

آگ میں بھی وہ بُلائے تو لپکتے جاویں

 

کیا ھی اچھا ھو کہ گِریہ بھی چلے ، سجدہ بھی

میرے آنسو ترے پیروں پہ ٹپکتے جاویں

 

تُو تو نعمت ھے سو شُکرانہ یہی ھے تیرا

پلکیں جھپکائے بِنا ھم تجھے تکتے جاویں

 

دم ھی لینے نہیں دیتے ھیں خدوخال ترے

دم بہ دم اور ذرا اور دمکتے جاویں

 

توڑنے والے کسی ھاتھ کی اُمید پہ ھم

کب تلک شاخِ غمِ ھجر پہ پکتے جاویں ؟

 

شیرخواروں کے سے بےبس ھیں ترے عشق میں ھم

بول تو سکتے نہیں ، روتے بلکتے جاویں

 

اب تو ٹھہرا ھے یہی کام ھمارا شب و روز

دُور سے دیکھیں تجھے اور بہکتے جاویں

 

عشق زادوں سے گذارش ھے کہ جاری رھے عشق

بَکنے والوں کو تو بَکنا ھے ، سو بَکتے جاویں

 

اُس کے رُخسار بھی شعلوں کی طرح ھیں ، یعنی

دھک اُٹھیں تو بہت دیر دھکتے جاویں

 

فارس اک روز اِسی عطر سے مہکے گا وہ شخص

آپ چُپ چاپ فقط جان چھڑکتے جاویں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

جیسی ہے بدن میں گل رخ کے ویسی ہی نزاکت باتوں میں
اِدھر اُدھر کہیں کوئی نشاں تو ھوگا ھی
تُو حاکم ھے تو اِن آفات پر رو کیا رھا ھے ؟
تختِ شطرنج پر بس ایک پیادہ ہے مرا
کیوں ہوش رُباء وقت ترے خواب مٹائے
اگرچہ بزم میں بالکل سمٹ کے ملتا ہے
دیدۂ خُشک آج بھر آیا
آیا نہ کام جب سرِ بازار فن کوئی
سخت بے چینی کا عالم بھی مکمل چین بھی
جہاں پہ سر تھا کبھی اب ہے سنگِ در کا نشاں

اشتہارات