اردوئے معلیٰ

عطائے ساقی ِفطرت ہے کیا حکیمانہ

ہر اک کو بخششِ مے ہے بقدرِ پیمانہ

 

اسی خمار کی مے ہے، وہی ہے پیمانہ

کہوں میں کیسے کہ بدلا ہے نظمِ میخانہ

 

امنگ و آرزو و شوق و حسرت و ارماں

نہ ہوں جو دل میں تو دل کیا ہے ایک ویرانہ

 

سکوں ہے دل کو مرے سجدہ ہائے باطل پر

گراں ہے مجھ پہ مگر اف نمازِ دو گانہ

 

اب آ، اے پردہ نشیں کیوں تجھے تامل ہے

درونِ سینہ ہے دل اور دلِ نہاں خانہ

 

یہی کمالِ ترقی ہے دورِ حاضر کا

ہمہ خصائلِ انساں ہوئے بہیمانہ

 

جنوں منافیِ ہوش و حواس کب ہے نظرؔ

کمالِ ہوش بناتا ہے تجھ کو دیوانہ

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات