’’عفو و عظمتِ خاکِ مدینہ کیا کہیے‘‘

 

’’عفو و عظمتِ خاکِ مدینہ کیا کہیے‘‘

علو و رفعتِ خاکِ مدینہ کیا کہیے

کہاں سے رتبہ کبھی اِس سے اعلا پائے فلک

’’اسی تراب کے صدقے ہے اعتدائے فلک‘‘

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

وہی جو مستوی عرش ہے خدا ہو کر
وہ مری نعت کا محتاج نہیں ، جنّت سے
مری سرکار ہیں شیریں سُخن معجز بیاں بھی
ہے مری چشم نم حبیبِؐ خُدا
کہیں تاریخِ عالم میں نہ دیکھا
جبیں میری ہے اُنؐ کا نقشِ پا ہے
کوئی اُنؐ سا نہیں کون و مکاں میں
گُلوں میں رنگ، خوشبو تازگی ہے
’’کروں مدح اہلِ دُوَل رضاؔ ، پڑے اس بلا میں مری بلا‘‘
’’بختِ خفتہ نے مجھے روضہ پہ جانے نہ دیا‘‘