اردوئے معلیٰ

Search

غم حسین میں دامن بھگائے جاتے ہیں

ہمیشہ خون کے آنسو بہائے جاتے ہیں

 

بجھا بجھا کے وہ خود اپنی زندگی کے دیے

چراغ حق و صداقت جلائے جاتے ہیں

 

یہی ہے رسم محبت ازل سے تا امروز

جو حق پرست ہیں وہ آزمائے جاتے ہیں

 

نہ داغ آئے شریعت کے پاک دامن پر

اسی لیے وہ لہو میں نہائے جاتے ہیں

 

نہ دیکھی جائے گی اسلام تیری رسوائی

یہ کہہ کے اپنا وہ سب کچھ لٹائے جاتے ہیں

 

حسین ہیں اسی گھر کے چراغ جس گھر کے

مکین سدرہ بھی درباں بنائے جاتے ہیں

 

زمانہ دیکھ کے حیراں ہے اسکی عظمت کو

رسول دوش پہ جسکو بٹھائے جاتے ہیں

 

حسین مجھ سے ہیں میں ہوں حسین سے کہہ کر

رسول انکی فضیلت بتائے جاتے ہیں

 

عجب تو یہ ہے جو امن واماں کے ہیں ضامن

ہزاروں ظلم و ستم ان پہ ڈھائے جاتے ہیں

 

تم انکا ذکر کرو ہم بھی اپنی پلکوں پر

انھیں کی یاد کے موتی سجائے جاتے ہیں

 

یزید نام کا اک بچہ بھی نہ پاؤ گے

مگر حسین تو گھر گھر میں پائے جاتے ہیں

 

اٹھا کے ہاتھ میں عزم حسین کا پرچم

’’ حسین والے زمانے میں چھائے جاتے ہیں ‘‘

 

یہ نورؔ انکا کلیجہ تھا ظلم سہہ سہہ کر

غموں کے سیل میں بھی مسکرائے جاتے ہیں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ