اردوئے معلیٰ

غم ہائے زمانہ سے ملے جب بھی مجھے چین

مصروف کروں دل کو بہ نعتِ شہِ کونین

 

وہ ختمِ رسل نورِ مبیں ہادی نجدین

وہ راحتِ جاں، فرحتِ دل، قرَّۃ عینین

 

جو مطلعِ مکہ پہ نمودار ہوا تھا

اس چاند کی ضو پھیل گئی تا سرِ قطبین

 

اللہ سے اللہ کے بندوں کو ملایا

لاریب وہ ہم سب کے لیے رحمتِ دارین

 

فکر و غمِ امّت کہ ہے لاحق اسے دن رات

آرام گیا دن کا، اُڑا رات کا سکھ چین

 

یہ صبر کہ بس آنکھ ہے نم مرگِ پسر پر

نالے ہیں، نہ زاری ہے نہ شیون ہے نہ ہے بین

 

ہر فیصلۂ عدلِ نبی مان لیں دل سے

مومن نہیں گر ہوں نہ رضامند فریقین

 

ہرگز نہ میں دوں در عوضِ دولتِ قاروں

ہے دولتِ کونین مجھے تسمۂ نعلین

 

صدیقؓ و عمرؓ مرقدِ انور کے بھی ساتھی

وہ غار کا ساتھی یہ مرادِ شہِ کونین

 

کندھوں پہ شہِ دیں کو اُٹھائے شبِ ہجرت

وہ غار کا ساتھی کہ جو ہے ثانی اَثنین

 

مدّاحِ نبی جان کے پوچھا نہیں کچھ بھی

آنے کو تو آئے مری تربت میں نکیرین

 

اک جام عطا کیجیے اے ساقئ کوثر

میں حق تو نہیں مانگتا ہاں صدقۂ حسنین

 

آؤ کہ نظرؔ تھام لیں دامانِ شہِ دیں

جھگڑے ہوں فرو ہیں جو مرے آپ کے مابین

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات