غیر کے بیش سے مطلب ہے نہ کم مانگتے ہیں

غیر کے بیش سے مطلب ہے نہ کم مانگتے ہیں

صاحبِ خیر و عنایات سے ہم مانگتے ہیں

 

خوار ہوں کیوں کسی محدود تمنا کے سبب

مالکِ جملہ نِعَم ! جملہ نِعَم مانگتے ہیں

 

ہم کو ہونا ہے نہاں خانۂ جاں سے روشن

ہم کفِ دل پہ ترا نقشِ قدم مانگتے ہیں

 

سطوت و عزت و عظمت کے حوالے یکسر

درگہِ ناز سے خیراتِ حشَم مانگتے ہیں

 

دم بدم انفس و آفاق کے امکانِ نمو

بہرِ تزئین ترا عکسِ شِیَم مانگتے ہیں

 

ہم نہیں کاسہ و دامن پہ قناعت والے

تجھ سے جب مانگتے ہیں خیرِ اَتم مانگتے ہیں

 

حرف لکھنے ہوں تو افکار سے لیتے ہیں خراج

نعت کہنی ہو تو پھر لوح و قلَم مانگتے ہیں

 

ہم کہاں صاحبِ توشہ ہیں کہ میزان لگے

ہم خطا کار ہیں اور اُن کا کرم مانگتے ہیں

 

یہ جو اِک لمحۂ تمدیحِ نبی ہے مقصودؔ

ہم اِسی لمحے میں اِک عمر کا ضَم مانگتے ہیں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ