اردوئے معلیٰ

Search

فقیر کاسہ بکف ہے آقا صدا لگاتا ہے بہرِ بخشش

لیے ہے سر پر عمل کی گٹھڑی نہیں کچھ اس میں سواے لغزش

 

یہ ایک مدت سے شہرِ ہجر و فراق سے محوِ التجاء ہے

یہ ایک مدت سے شہرِ نور و کرم کی دل میں لیے ہے خواہش

 

میں ڈھونڈتا ہوں ہر اک زباں میں، سبھی حروف ان کی شاں کے شایاں

ہیں حرف معذور، نطق بے بس کرے یہ کیسے تری ستائش

 

عجیب پر نور کیف آور فضا حرم کی ہے میرے آقا

عجب تحیر میں صحنِ طیبہ میں دیکھتا ہوں کرم کی بارش

 

کرم وہ فرمائیں روزِ محشر سکون مجرم کو تب ملے گا

ہلاکتوں سے بچائیں مجھ کو کریم میرے یہ ہے گزارش

 

بندھی ہے ڈھارس دعائے سلِّم کے آسرے پر رواں دواں ہیں

کریم آقا کرم سے اپنے سنبھالتے ہیں قدم کی جنبش

 

عبث ہے کارِ سخن سراسر اگر نہ ہو حسنِ نعتِ سرور

قبولِ دربار کرلیں آقا یہ اپنے منظر کی خام کوشش

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ