اردوئے معلیٰ

قافلے یا راستے یا نقشِ پا کچھ بھی نہیں

قافلے یا راستے یا نقشِ پا کچھ بھی نہیں

کرہِ آتش پہ آتش کے سوا کچھ بھی نہیں

 

کیوں الٹ دیجے نہ آخر عمر کی زنبیل کو

یوں بھی اس کم بخت میں باقی رہا کچھ بھی نہیں

 

جس کو چھوتا ہے اسے پتھر بنا دیتا ہے دل

اور اس کے لمسِ قاتل سے بچا کچھ بھی نہیں

 

کیا تہی دامانیِ امید ہی مقسوم ہے

اب برائے کاسہِ امکان کیا کچھ بھی نہیں

 

سر دھنے جاتے رہے ہیں محض رسماً آج تک

تو سخن ، اسلوب ، لہجہ یا نوا کچھ بھی نہیں

 

اتفاقاً چھو لیا ہو گا دلِ بے نور نے

اس اندھیرے میں وگرنہ سوجھتا کچھ بھی نہیں

 

پانچواں عنصر کہاں سے لے کے آئیں بے دلی

جبکہ خاک و آتش و آب و ہوا کچھ بھی نہیں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ