’’قبر کا ہر ذرّہ اک خورشیدِ تاباں ہو ابھی ‘‘

 

’’قبر کا ہر ذرّہ اک خورشیدِ تاباں ہو ابھی ‘‘

ظلمتِ مرقد میں پھیلے روشنی ہی روشنی

تم جو ہو جلوا نما مہرِ عجم ماہِ عرب

’’رُخ سے پردا دو ہٹا مہرِ عجم ماہِ عرب‘‘

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ