اردوئے معلیٰ

Search

قرآن کہا جائے نہ تفسیر کہا جائے

ہر فتویِٰ تکفیر کو تقصیر کہا جائے

 

کس حرفِ طرح دار پہ انگشتِ یقیں رکھیں

کس عکس کو سچائی کی تصویر کہا جائے

 

کس دستِ مسیحائی پہ بیمار کریں بیعت

جب زہرِ ہلاہل کو بھی اکسیر کہا جائے

 

معیار بدلتے ہوئے اس دور میں ممکن ہے

اک روز اندھیرے کو بھی تنویر کہا جائے

 

آداب کو اب فہرسِ بیکار میں لکھ ڈالو

اقدار کو اب پاؤں کی زنجیر کہا جائے

 

بینائی جنہیں ملتی ہے ہو جاتے ہیں دیوانے

آنکھوں کو مرے عہد میں تعزیر کہا جائے

 

اشکوں کو ترے نا مۂ اعمال میں لکھوں میں

یا ان کو کسی خواب کی تعبیر کہا جائے

 

ہجرت ہو کہ ہجراں ہو، غمِ جاں کہ غمِ جاناں

ہر درد کو اُس نام کی جاگیر کہا جائے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ