قرارِ قلبِ مضطر ہیں مکینِ گنبدِ خضریٰ

 

قرارِ قلبِ مضطر ہیں مکینِ گنبدِ خضریٰ

محبت ہی سراسر ہیں مکینِ گنبدِ خضریٰ

 

انہی کے روئے انور سے ہے خورشیدِ فلک روشن

ضیائے ماہ و اختر ہیں مکینِ گنبدِ خضریٰ

 

بشر ہونے کا اعلاں بھی یقینا حق پہ مبنی ہے

پہ نورِ ربِ اکبر ہیں مکینِ گنبدِ خضریٰ

 

چنیں پلکوں سے خاکِ پا تمنا دل میں ہے لیکن

کہاں ایسے مقدر ہیں، مکینِ گنبدِ خضریٰ

 

علی و فاطمہ ہوں یا کہ وہ شبیر و شبر ہوں

تمہارے سارے گوہر ہیں مکینِ گنبدِ خضریٰ

 

ڈراؤ مت ہمیں ہنگامِ محشر سے ارے واعظ

شفاعت کو میسر ہیں مکینِ گنبدِ خضریٰ

 

سبھی اجداد و مرشد کا ادب تسلیم ہے مجھ کو

مگر آقائے منظرؔ ہیں مکینِ گنبدِ خضریٰ

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ