اردوئے معلیٰ

Search

قرب انوار مدینہ سے چمکتا ہُوا دِل

چاند تاروں سے سوا خود کو سمجھتا ہُوا دِل

 

آج چہکا ہے مدینے کے کبوتر کی طرح

گنبدِ سبز کے اطراف میں اُڑتا ہُوا دِل

 

اپنی قسمت پہ بہت ناز کِیا کرتا ہے

حرمِ پاک کےاِک طاق میں رکھا ہُوا دِل

 

مجھ سے پہلے درِ احمد سے لپٹنا ہے اسے

میرے قابو میں کہاں ہے یہ ہُمکتا ہُوا دِل

 

نعت کہتے ہوئے اکثر مجھے محسوس ہُوا

شدتِ جذب سے کاغذ پہ اُترتا ہُوا دِل

 

ممکنہ حد میں کھڑی اشک بہاتی ہوئی میں

جا لگا ہے درِ اقدس سے سرکتا ہُوا دِل

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ