اردوئے معلیٰ

Search

قریۂ خوشبو مری سانسوں کو مہکانے لگا

دھڑکنوں میں بھی درودی کیف سا چھانے لگا

 

ہیں نخیلِ نُور یا قدسی قطار اندر قطار

جگمگاتا سا حسیں منظر نظر آنے لگا

 

سبز گنبد سامنے ہے اور آنکھیں اشکبار

پھر مقدّر دید کی امّید بر لانے لگا

 

کہکشاں شمس وقمر راہوں میں ایسے بچھ گئے

آسماں جیسے زمیں کو چومنے آنے لگا

 

آرزوئیں پا برہنہ خواہشیں بھی دم بخود

آنکھ پتھرائی ہوئی اور دل بھی شرمانے لگا

 

کیوں کسی کو مانگنے کی اب یہاں حاجت رہے

بے طلب ہی ہر گدا خیرات جب پانے لگا

 

روح کی تغسیل جب اشکِ ندامت سے ہوئی

دل ہوا مُحرِم طوافِ شوق کو جانے لگا

 

لوٹ بھی جاؤں میں شہرِ نور سے نوری اگر

دل بہانہ جُو ہے میرا ’’کیوں بھلا‘‘ جانے لگا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ