اردوئے معلیٰ

قصہء شقِّ قمر یاد آیا​

حسنِ اعجازِ بشر یاد آیا​

 

​آہِ سوزاں کا اثر یاد آیا​

اُن کا فیضانِ نظر یاد آیا​

 

​اُن کے دیوانے کو اُن کے در پر​

دشت یاد آیا نہ گھر یاد آیا​

 

​دیکھ کر شامِ مدینہ کا کمال​

مطلعِ نورِ سحر یاد آیا​

 

​کب نہ تھی مجھ پہ عنایت کی نظر​

یاد کب عالمِ فریاد آیا​

 

​پھر مدینے کو چلے اہلِ نیاز​

پھر کوئی خاک بسر یاد آیا​

 

​منزلِ قدس پہ پہنچے تو ایاز​

سجدہء راہ گزر یاد آیا​

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات