قصہء شقِّ قمر یاد آیا​

قصہء شقِّ قمر یاد آیا​

حسنِ اعجازِ بشر یاد آیا​

 

​آہِ سوزاں کا اثر یاد آیا​

اُن کا فیضانِ نظر یاد آیا​

 

​اُن کے دیوانے کو اُن کے در پر​

دشت یاد آیا نہ گھر یاد آیا​

 

​دیکھ کر شامِ مدینہ کا کمال​

مطلعِ نورِ سحر یاد آیا​

 

​کب نہ تھی مجھ پہ عنایت کی نظر​

یاد کب عالمِ فریاد آیا​

 

​پھر مدینے کو چلے اہلِ نیاز​

پھر کوئی خاک بسر یاد آیا​

 

​منزلِ قدس پہ پہنچے تو ایاز​

سجدہء راہ گزر یاد آیا​

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

عالمِ قُدس كی توقیر بڑھانے والے
آگیا ہے چین دل کو در تمھارا دیکھ کر
حسن مطلق کے لیے ذاتِ گرامی چاہیے
جب بھی ہم تذکرۂ شہرِ پیمبر لکھیں
نماز
فضا میں کھیلتی خوشبو ہے جو مدینے کی
کہوں میں نعت نبی اور گنگناؤں اُسے
قبلہ کا بھی کعبہ رُخِ نیکو نظر آیا
کچھ غم نہیں اگرچہ زمانہ ہو بر خلاف
باغِ جنت میں نرالی چمن آرائی ہے

اشتہارات