اردوئے معلیٰ

لایا تو ہُوں مَیں باندھ کے امکانِ حرف و لفظ

شایاں نہیں یہ آپ کے، سامانِ حرف و لفظ

 

یوں مِل رہی ہے نعت کی خیرات دم بدم

کم پڑ رہا ہے میرا تو دامانِ حرف و لفظ

 

لکھی ہُوئی نعوت ہیں، سوچی ہوئی نعوت

فردِ عمل ہے اپنی تو دیوانِ حرف و لفظ

 

واللہ تیری نعت ہے عینِ رُخِ حیات

واللہ تیرا نام ہے عنوانِ حرف و لفظ

 

ہے تیرا نام لیوا ہی مُلکِ سخن کا شہ

ہے تیرا نعت گو ہی تو سلطانِ حرف و لفظ

 

احمد رضا و جامی و اقبالِ بے بدل

کیسے تھے ذی حشم ترے خاصانِ حرف و لفظ

 

ممکن نہیں ہے صاحبِ بُردہ کا ذوق و شوق

ممکن نہیں ہے پھر کوئی حسّانِ حرف و لفظ

 

صُورت میں اُن کی رخشاں ہیں آیاتِ نُور نُور

سیرت میں اُن کی مہکا ہے قُرآنِ حرف و لفظ

 

نعتِ نبی ہے مظہرِ معراجِ شوقِ کُل

نعتِ نبی ہے روحِ سخن، جانِ حرف و لفظ

 

بے سمت راستوں کا سفر رائیگاں نہ ہو

شہرِ ثنا میں آ ! مرے حیرانِ حرف و لفظ

 

مقصودؔ اپنے فن کو عقیدت سے دے نمو

قائم رہیں گے یوں ترے اوسانِ حرف و لفظ

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات