اردوئے معلیٰ

لب شاد ، زباں شاد ، دہن شاد ہوا ہے

سرکار کی مدحت سے سخن شاد ہوا ہے

 

اس نور کے آنے سے ہوا دور اندھیرا

اس پھول کی آمد سے چمن شاد ہوا ہے

 

طیبہ کی فضاؤں سے ملی روح کو راحت

پُر کیف ہواؤں سے بدن شاد ہوا ہے

 

تخصیصِ محمد سے ہوئی نعت مکمل

تعریفِ محمد سے یہ فن شاد ہوا ہے

 

ہر برگ و شجر ، زہرہ پہ آئی ہیں بہاریں

آپ آئے تو ہر دشت و دمن شاد ہوا ہے

 

دیکھا ہے کبھی طائرِ خوش رنگ دمِ صبح؟

توصیف و ثناء میں ہے مگن شاد ہوا ہے

 

اک میں ہی مسرت میں نہیں گم ہوا آسی

دیوانہ ہر اک واقعتاً شاد ہوا ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات